تقدیر کے کمالات اور ہر چیز میں اچھائی کو سمجھنے میں ناکامی

قرآن کی ایک آیت میں اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے-"---ممکن ہے کہ تم کسی چیز کو بری جانو اور دراصل وہی تمحارے لیے بھلی ہو اور یہ بھی ممکن ہے کہ تم کسی چیز کو اچھی سمجھو حالانکہ وہ تمھا رے لیے بری ہو، اللہ جانتا ہے تم نہیں جانتے۔ سورۃ بقرۃ -۲۱۶" - زندگی کے دوران لوگوں کو غیر متوقع، نا پسندیدہ اور نا مناسب حالات کا سامنا ہوتا ہے۔ ہر واقع میں ایک خاص محل و قوع انکے امتحان کے لیے تخلیق کیا گیا ہے، جیسا کہ ہمیں اس آیت میں بتایا گیا –"جس نے موت اور حیات کو پیدا کیا تاکہ آزمائے کہ تم میں سے کون اچھے کام کرتا ہے----- سورۃ الملک-۲" حالات چاہے کتنے ہی نا مناسب اور منفی نظر آئیں لوگوں کو چاہئے کہ ہر حال میں اللہ پر بھروسہ کریں اور اس بات سے آگاہ رہیں کہ انکے پرور دگار نے پہلے سے ہر واقع میں انکے لیے اچھائی لکھ دی ہے۔ ایک ایمان والا دل میں جو حفاظت اور اطاعت محسوس کرتا ہے وہ اسکے اخلاق کو قابو کرتا ہے۔یہی وہ اصلاحی عمل ہے جس کی وجہ سے مومن اللہ پر بھروسہ کرتا ہے۔

 



اللہ پر بھروسہ کرنا اللہ کی طرف سے ایک رحمت ہے اور لوگوں کے لیے عظیم تسّلی بخش ہے۔ لوگ جو اللہ کی بتائی ہوئی سچائی پر بھروسہ کرتے ہیں جیسا کہ آیت میں ہے" اور تمہیں جو کچھ اس دن پہنچا جس دن دو جماعتیں مڈ بھیڑ ہوئی تھی، وہ سب اللہ کے حکم سے تھا--- سورۃ آل عمران ۱۶۶" مکمل طور پر اللہ کی حکمت کے آگے جھک جاتے ہیں چناچہ وہ زندگی کے ہر لمحے میں خوبصورتی اور رحمت دیکھتے ہیں اور اپنے اخلاق کے ذریعے اللہ پربھروسہ اور یقین کو ظاہر کرتے ہیں۔ اس اخلاق کے بدلے میں، اللہ پاک انکے راستے آسان کرتا ہے جیسا کہ ہمیں اس آیت میں بتایا گیا ہے۔"----اور جو اللہ سے ڈرے گا اللہ اسکے ہر کام میں آسانی کر دیگا-سورۃ الطلاق-۴"۔جیسا کہ اللہ ہمیں اس آیت میں بتاتا ہے۔"وہی ہے جس نے مسلمانوں کے دلوں میں سکون اور اطمینان ڈال دیا تاکہ اپنے ایمان کے ساتھ ہی ساتھ اور بھی ایمان میں بڑھ جائیں اور آسمانوں اور زمین کے لشکر اللہ ہی کے ہیں اور اللہ دانا با حکمت ہے-سورۃ الفتح -۴" انکے اللہ کے آگے جھک جانے کے بدلے میں، اللہ مومنوں کے دلوں کو پر سکون کرتا ہے اور انکو حفاظت اور اطمینان کا احساس دلاتا ہے۔

قرآن ہمیں بتاتا ہے کہ کس طرح ایک مومن اپنی اطاعت کا اظہار کرتا ہے جو یہ جانتا ہے کہ اس زمین پر پیدا ہونے والے ہر اچھے اور برے واقع کو اللہ انکے لیے با برکت اور سازگار کریگا:

"آخر کیا وجہ ہے کہ ہم اللہ تعالٰی پر بھروسہ نہ کریں جبکہ اسنے ہمیں راہیں سجھائی ہیں۔واللہ جو تکلیفیں تم ہمیں دو گے ہم ان پر صبر ہی کریں گے۔توکلّ کرنے والوں کو یہی لائق ہے کہ اللہ پر توکلّ کریں-سورۃ ابراھیم-۱۲":

ایک انسان جو اللہ پر بھروسہ کرتا ہے اسکو کوئی غم یا تکلیف نہیں ہوتی- یہ اللہ کا وعدہ ہے اسکے پر خلوص ماننے والوں سے۔قرآن ہمیں بتاتا ہے:

" بے شک جن لوگوں نے کہا کہ ہمارا رب اللہ ہے اور پھر اس پر جمے رہے تو ان پر نا تو کوئی خوف ہو گا اور نا وہ غمگین ہونگے"

 



جیسا کہ ہمیں پتا چلتا ہے، اللہ کے آگے جھک جانا ، اگر اللہ چاہے، ہر چیز کو آسان کرتا ہے ۔ اللہ کو نا ماننا ، انسان کی زندگی کا ہر لمحہ اضافی مشکلات، پریشانی اور غم کا باعث بنتا ہے۔ہر کام مشکل ہو جاتا ہے یہاں تک کہ نا قابل حل ہو جاتا ہے۔ان لوگوں کے لیے جو اللہ کے آگے نہیں جھکتے، ایک بہت ہی عام سا اور معمولی سا کام جسکا حل بہت ہی آسان ہوتا ہے انکی نظروں میں بہت ہی مشکل ہو جاتا ہے۔یہاں تک کہ جب وہ یہ کہتے ہیں کہ وہ اللہ پر یقین کرتے ہیں وہ یہ بھول جاتے ہیں کہ تقدیر کیسے حیران کن سانچے میں بنائی گئی ہے یا وہ اس خیال میں پھنس جاتے ہیں کہ واقعات اللہ کی دسترس سے باہر ہیں [یقینا ہر چیز اللہ کے اختیار میں ہے]۔اسی وجہ سے وہ انکے ساتھ پیش آنے والے واقعات کو مثبت انداز میں نہیں دیکھ سکتے اور واقع میں انکو اچھائی نظر نہیں آتی۔وہ ہر وقت ایک خوف اور پریشانی میں رہتے ہیں۔اللہ پر بھروسہ نا کرنے کی وجہ سے منفی امکانات کی سوچ سے وہ ایک تناوُ کا شکار رہتے ہیں جبکہ ایسا کچھ بھی نہیں ہونے والا ہوتا۔ اسی طرح جو معاملات اور واقعات بلکل صحیح چل رہے ہوتے ہیں، انمیں انھیں بیان کرنے کے لیے نقائص نظر آجا تے ہیں۔

اسکے علاوہ ، کیونکہ وہ یہ نہیں سمجھتے کہ ہر واقعہ جو وہ تجربہ کرتے ہیں اللہ کی طرف سے ہوتا ہے، وہ اپنے اس یقن کی وجہ سے کہ ہر مشکل اور پریشانی انکو خود ہی حل کرنی ہے وہ ایک خوفناک مصیبت میں پھنس جاتے ہیں۔حقیقت میں، چاہے وہ کچھ بھی کرلیں، اگر اللہ نا چاہے تو کسی چیز کا بھی حل نا ممکن ہے۔ اسی وجہ سے ایک اطاعت گذار بندہ ہر حل کے لیے اقدام کریگا اورہر ممکن کوشش کرے گا جو وہ کرسکتا ہے مگر چونکہ وہ جانتا ہے کہ نتیجہ اللہ ہی لائیں گے لہذا وہ ہر چیز بہت ہی اطمینان اور آرام سے کرتا ہے۔

وہ لوگ جو اللہ کے آگے نہیں جھکتے روز مرہ زندگی میں تواتر مشکلات کا سامنا کرتے ہیں۔مثال کے طور پر، آپ نے اکثر ایک ایسے شخص جسکی کام پر جاتے ہوئے سواری چھوٹ جائے، غصہ سے بھرے الفاظ اور شدت کا مشاہدہ کیا ہوگا۔وہ کئی لمحہ تک اپنے آپکو سنبھال نہیں سکتا۔اگرچہ اسکو کوئی اور راستہ مل جائے وقت پر کام پر پہنچنے کا پھر بھی وہ اس واقع کی وجہ سے سارا دن ذہنی طور پر پریشان رہتا ہے۔ اس سوچ کے ساتھ کہ اس دن ہر چیز غلط ہوگی جسکی شروعا ت بری ہو وہ اپنے آپ کو خود اذیت اورتناوُ میں مبتلا کرتا ہے۔اسکے بجائے اگر وہ ممکنہ فائدہ پر غور کرتا جو اللہ نے اس واقعہ میں رکھے ہو سکتے ہیں تو اسکو اتنی مشکلات پیش نا آتیں اور ان حالات میں بھی جب ہر چیز الٹی ہوتی نظر آئے وہ اللہ کی خوشنودی کی امید کریگا کیونکہ اسنے اللہ کے آگے اپنے آپ کو پیش کر دیا ہے۔

اسی طرح ایک شخص جو ایکسیڈنٹ میں ذخمی ہو گیا ہو وہ اپنے آپ کو ان فکرات سے نہیں بچا سکتا جو اللہ پر بھروسہ نا کرنے کی وجہ سے اس پر آتی ہیں۔کیونکہ وہ یہ بھول جاتا ہے کہ وہ اللہ ہی ہے جس نے اسکے لیے یہ واقع پیدا کیا، وہ گاڑی کے چلانے والے میں خرابی دیکھتا ہے یا اپنے آپ میں خرابی دیکھتا ہے اور غصہ ہو جاتا ہے۔حقیقت میں اسکی ساری فکرات بے بنیاد ہوتی ہیں۔ اس طرح کے حالات میں، جو کچھ ہوا اس کے ایک مثبت رخ کے بارے میں سوچنا اس شخص کو اس نا قبل مصالحت فکر سے باہر نکالنے کے لیے کافی ہے

 



مثال کے طور پر، غور کیا جائے کہ زخمی ہونے کے بجائے موت بھی واقع ہو سکتی تھی اور یہ وجہ ہے اللہ کے شکرگزار ہونے کی اور اطمینان اور مسرت کی۔ یا مریض کو یہ سوچتے ہوئے خوشی محصوص کرنی چاہئیے کہ ان زخموں نے اسکو موت اور آخرت کی یا د دلائی اور اس چیز نے اسکو اللہ سے قریب کیا اور اللہ کا خوف پیدا ہوا اور اسکی عجب اور تکبر سے حفاظت کی اور اسکی اطاعت اللہ کو اس سے خوش کریگی۔اور یہ اسکو آخرت میں بہت سی نعمتوں اور فائدوں سے نوازیگی۔چناچہ جو شخص اللہ پر اور حساب کتاب والے دن پر مکمل یقین کرتا ہے وہ یہ سمجھتا ہے کہ ہر واقع میں اللہ نے رحمت اور فائدہ رکھا ہے۔

لوگ جو مکمل یقین نہیں رکھتے وہ عام طور پر ناشکری والا رویّہ اختیار کرتے ہیں۔ اور اسکی وجہ سے، ان لوگوں کے مقابلے میں جو اللہ پر مکمل یقین رکھتے ہیں، انکی زندگیاں مشکلات اور غموں سے بھری ہوتی ہیں۔ ایسے لوگ اگر اللہ کے اطاعت گذار بن جائیں جیسا کہ اس آیت میں سکھایا گیا ہے " وہ لوگ کہ جب ان سے لوگوں نے کہا کہ کافروں نے تمھارے مقابلے پر لشکر جمع کر لئے ہیں تم ان سے خوف کھاوُ تو اس بات نے انہیں ایمان میں اور بڑھا دیا اور کہنے لگے ہمیں اللہ کافی ہے اور وہ بہت اچھا کار ساز ہے" تو انکے سارے غم اور تکلیفیں ختم ہو جائیں۔


2010-05-05 08:06:32

About this site | اپنا ہوم پیج بنائیں | Add to favorites | RSS Feed
اس ویب سایئٹ کا حوالہ دے کر، تمام مواد کاپی، پرنٹ اور مفت بانٹا جا سکتا ہے
(c) All publication rights of the personal photos of Mr. Adnan Oktar that are present in our website and in all other Harun Yahya works belong to Global Publication Ltd. Co. They cannot be used or published without prior consent even if used partially.
۲۰۰۴ ہارون یٰحی
page_top
iddialaracevap.com adnanoktarhaber.com adnanoktarhukuk.com adnanoktargercekleri.net
"Biz FETÖNÜN ANTİSİYİZ...."
“Bu dava sürecinde.... sözde dijital delillerin ibraz edilmemesi gibi pek...
"Zaten biz birbirimizi bu kadar çok sevdiğimiz için buradayız..."
"Biz bir arkadaş grubuyuz..."
"...Biz Vakıf faaliyetlerimiz ile her zaman Devletimizin yanında olduk"
"Biz kimseyle ilgili karalama faaliyeti yapmadık..."
"...Sözde tecavüz için mi buradaki arkadaşlarımla biraraya geleceğim?!"
"...Faaliyetlerimiz herkese hitap ediyor ..."
"Bizim amacımız şatafat içinde yaşamak değil, hiç kimsenin hitap edemediği...
"İnancım gereği ben insanlara yardım ederim"
"Ne yapsa "zorla" diyorlar. Zorla Gülümsüyor, Zorla, Zorla olur mu?"
"Bizim bir arada olma amacımız örgüt kurmak değil. ilmi mücadele...
"Biz birbirimizi Allah için seven.. arkadaşlarız"
"Polisler geldi, hangi eve operasyon yapacağız derlerken, balkona çıkıp...
"Biz örgüt değiliz"
"Devletimizi desteklediğimiz çok hayırlı faaliyetlerimiz var, Bunlar...
"Biz Allah`tan Razıyız Allah da Bizlerden Razı olur inşaAllah"
"İddia edildiği gibi katı bir ortam olsa 40-50 yıl niye kalalım?"
"Neden cömertsin?" diye soruyorlar
"İngiliz Derin Devleti bunu duyunca çıldırdı..."
"Biz Milli değerler etrafında birleşmiş bir sivil toplum kuruluşuyuz"
"Bir imza atıp dışarı çıkmayı ben de bilirim. Ama iftira büyük suçtur."
"Ben varlıklı bir aileden geliyorum, Saat koleksiyonum var"
"Silahlı suç örgütü iddiası tamamen asılsızdır, yalandır, iftiradır."
"Bizim yaptığımız tek şey Allah'ın yaratışını anlatmaktır."
"Almanya'da İslamofobi var, İslam düşmanları var..."
Bir örgüt olsak devlet bizimle faaliyette bulunur mu?
DAVAMIZ METAFİZİKTİR – 2. BÖLÜM
DAVAMIZ METAFİZİKTİR – 1. BÖLÜM
MAHKEME SÜRECİNDE SİLİVRİ CEZAEVİNDE YAŞANAN EZİYET VE ZULÜMLER
"Ben Sayın Adnan Oktar `dan hiçbir zaman Şiddet, Eziyet, Baskı görmedim."
DAVA DOSYASINDAKİ CİNSELLİK KONULU İDDİALAR TÜMÜYLE GEÇERSİZDİR
DURUŞMALARIN İLK HAFTASI
"İNFAK" SUÇ DEĞİL, KURAN'IN FARZ KILDIĞI BİR İBADETTİR
GERÇEK TURNİKE SİSTEMİ GENELEVLERDE
Adnan Oktar davasının ilk duruşması bugün yapıldı.
AVK. UĞUR POYRAZ: "MEDYADA FIRTINA ESTİRİLEREK KAMUOYU ŞARTLANDIRILDI,...
Adnan Oktar'ın itirafçılığa zorlanan arkadaşlarına sosyal medyadan destek...
Adnan Oktar suç örgütü değildir açıklaması.
Adnan Oktar'ın cezaevinden Odatv'ye yazdığı mektubu
Adnan Oktar'dan Cumhurbaşkanı Sayın Recep Tayyip Erdoğan'a mektup
Casuslukla suçlanmışlardı, milli çıktılar.
TBAV çevresinden "Bizler suç örgütü değiliz,kardeşiz" açıklaması
Bu sitelerin ne zararı var!
Adnan Oktar ve arkadaşları 15 Temmuz'da ne yaptılar?
Sibel Yılmaztürk'ün cezaevinden mektubu
İğrenç ve münasebsiz iftiraya ağabey Kenan Oktar'dan açıklama geldi.
Adnan Oktar ve arkadaşlarına Emniyet Müdürlüğü önünde destek ve açıklama...
Adnan Oktar hakkında yapılan sokak röportajında vatandaşların görüşü
Karar gazetesi yazarı Yıldıray Oğur'dan Adnan Oktar operasyonu...
Cumhurbaşkanı Sayın Recep Tayyip Erdoğan'dan Adnan Oktar ile ilgili...
Ahmet Hakan'nın Ceylan Özgül şüphesi.
HarunYahya eserlerinin engellenmesi, yaratılış inancının etkisini kırmayı...
Kedicikler 50bin liraya itirafçı oldu.
Adnan Oktar ve arkadaşlarına yönelik operasyonda silahlar ruhsatlı ve...
FETÖ'cü savcının davayı kapattığı haberi asılsız çıktı.
Adnan Oktar ve arkadaşlarının davasında mali suç yok...
Cemaat ve Vakıfları tedirgin eden haksız operasyon: Adnan Oktar operasyonu...
Tutukluluk süreleri baskı ve zorluk ile işkenceye dönüşüyor.
Adnan Oktar’ın Cezaevi Fotoğrafları Ortaya Çıktı!
"Milyar tane evladım olsa, milyarını ve kendi canımı Adnan Oktar'a feda...
Adnan Oktar davasında baskı ve zorla itirafçılık konusu tartışıldı.
Adnan Oktar ve arkadaşlarının davasında iftiracılık müessesesine dikkat...
Adnan Oktar davasında hukuki açıklama
Adnan Oktar ve Arkadaşlarının Masak Raporlarında Komik rakamlar
Adnan Oktar ve Arkadaşlarının tutukluluk süresi hukuku zedeledi.
Adnan Oktar'ın Museviler ile görüşmesi...
Adnan Oktar ve arkadaşlarına yönelik suçlamalara cevap verilen web sitesi...
Adnan Oktar ve arkadaşlarına karşı İngiliz Derin Devleti hareketi!
Adnan Oktar iddianamesinde yer alan şikayetçi ve mağdurlar baskı altında...
Adnan Oktar iddianamesi hazırlandı.
SAYIN NEDİM ŞENER'E AÇIK MEKTUP
Adnan Oktar ve Nazarbayev gerçeği!
En kolay isnat edilen suç cinsel suçlar Adnan Oktar ve Arkadaşlarına...
Adnan Oktar kaçmamış!
BİR KISIM MEDYA KURULUŞLARINA ÇAĞRI !!!
FİŞLEME SAFSATASI
İSA TATLICAN: BİR HUSUMETLİ PORTRESİ
SİLİVRİ CEZAEVİNDE YAŞANAN İNSAN HAKLARI İHLALLERİ
MÜMİNLERİN YARDIMLAŞMASI VE DAYANIŞMASI ALLAH'IN EMRİDİR
GÜLÜNÇ VE ASILSIZ "KAÇIŞ" YALANI
ABDURRAHMAN DİLİPAK BİLMELİDİR Kİ KURAN’A GÖRE, ZİNA İFTİRASI ATANIN...
YALANLAR BİTMİYOR
SAÇ MODELİ ÜZERİNDEN KARA PROPAGANDA
TAHLİYE EDİLENLERE LİNÇ KAMPANYASI ÇOK YANLIŞ
MEDYA MASALLARI ASPARAGAS ÇIKMAYA DEVAM EDİYOR
Adnan Oktar ve Arkadaşlarının ilk duruşma tarihi belli oldu.
AKİT TV VE YENİ AKİT GAZETESİNE ÖNEMLİ NASİHAT
YAŞAR OKUYAN AĞABEYİMİZE AÇIK MEKTUP
KARA PARA AKLAMA İDDİALARINA CEVAP
Adnan Oktar ve FETÖ bağlantısı olmadığı ortaya çıktı.
TAKVİM GAZETESİNİN ALGI OPERASYONU
Adnan Oktar ve Arkadaşlarına yönelik suçlamaların iftira olduğu anlaşıldı.
"Bizler Suç Örgütü Değiliz..."